انصاف کے تقاضے

آج کیا سوچ رہے ہو ؟ نوری نے پوچھا ! کچھ نہیں دوست محمد کی یاد آ گئی ، میں بولا ! کون تھا یہ دوست محمد ؟ نوری نے وضاحت مانگی ! ” دوست محمد ایک عام پاکستانی تھا اس کا بیٹا ایک امیر آدمی کی گولی کا نشانہ بنا ، حادثے کے دس گواہوں کے علاوہ آلۂ قتل بھی بازیاب ہو گیا مگر پانچ سال تک عدالتیں انصاف نہ دے پائیں. دوست محمد غریب تھا اور قاتل با اثر اور دولت مند! کبھی عدالت میں جج نہیں آتے تھے اور کبھی وکیل ہڑتالوں پر چلے جاتے تھے. پچھلے ہفتے دوست محمد پانچ سال عدالت کے دروازے پر دستک دینے کے بعد اپنی ہی جان کی بازی ہار گیا، دل بند ہو گیا بے چارے کا ، اب آگے کیا ہو گا، کوئی میڈیا ہاؤس کسی دوست محمد کی خبر نہیں چلاتا ؟” کچھ نہیں ہو گا ، نوری بولا ! وہ کیوں ” میں نے پوچھا ؟ کیونکہ وہ دوست محمد تھا ، آیان علی نہیں 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *