شہبازشریف کے جسمانی ریمانڈ میں 6 دسمبر تک توسیع کر دی گئی

News Desk

آشیانہ ہاوسنگ سکینڈل میں قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر اور سابق وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف کے جسمانی ریمانڈ میں 6 دن کی توسیع کر دی گئی ۔لاہور کی احتساب عدالت میں نیب حکام نےشہباز شریف کا  7 روزہ راہداری ریمانڈ ختم ہونے پرانہیں  عدالت میں پیش کیا۔دوران سماعت نیب حکام کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا کہ اب تک  54 روزہ ریمانڈ منظور ہو چکا ہے۔

19 تاریخ کو شہباز شریف کو سوال نامہ دیا گیا تھا تاہم تحریری سوالات پوچھنے پر شہباز شریف نے کہا کہ وہ قانونی مشاورت کے بعد جواب دیں گے۔ دوران سماعت شہباز شریف نے کہا کہ نیب کی جانب سے حقائق سے مبرا باتیں کی جارہی ہیں جس پر عدالت نے انہیں ہدایت کی کہ وہ اپنے پوائنٹس نوٹ کر لیں اور اپنی باری پر بات کریں۔شہباز شریف کے وکیل نے شہباز شریف کی ٹیسٹ رپورٹ عدالت میں پڑھ کر سنائی اور عدالت سے درخواست کی کہ وہ بہتر علاج کی سہولیات فراہم کرنے کی اجازت دیں جس پر نیب نے عدالت کو بتایا کہ ہم شہباز شریف کو مکمل علاج کی سہولیات دے رہے ہیں، دھوپ میں بھی لے جایا جاتا ہے اور پر سکون اور فرنیشڈ کمرے میں منتقل کر دیا ہے۔

نیب وکیل نے استدعا کی کہ شہباز شریف سے ابھی مزید تفتیش درکار ہے عدالت جسمانی ریمانڈ میں توسیع کرے۔ شہباز شریف کے وکیل نے جسمانی ریمانڈ کی مخالفت کی اور کہا 55 روز گزر گئے نیب کچھ ثابت نہیں کرسکا۔سماعت کے بعد احتساب عدالت کے جج سید نجم الحسن نے 6 روزہ جسمانی ریمانڈ پر میاں شہباز شریف کو نیب حکام کے حوالے کر دیا ۔اس موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات تھے اور نون لیگی کارکن بھی جمع تھے 

19 تاریخ کو شہباز شریف کو سوال نامہ دیا گیا تھا تاہم تحریری سوالات پوچھنے پر شہباز شریف نے کہا کہ وہ قانونی مشاورت کے بعد جواب دیں گے۔ دوران سماعت شہباز شریف نے کہا کہ نیب کی جانب سے حقائق سے مبرا باتیں کی جارہی ہیں جس پر عدالت نے انہیں ہدایت کی کہ وہ اپنے پوائنٹس نوٹ کر لیں اور اپنی باری پر بات کریں۔

شہباز شریف کے وکیل نے شہباز شریف کی ٹیسٹ رپورٹ عدالت میں پڑھ کر سنائی اور عدالت سے درخواست کی کہ وہ بہتر علاج کی سہولیات فراہم کرنے کی اجازت دیں جس پر نیب نے عدالت کو بتایا کہ ہم شہباز شریف کو مکمل علاج کی سہولیات دے رہے ہیں، دھوپ میں بھی لے جایا جاتا ہے اور پر سکون اور فرنیشڈ کمرے میں منتقل کر دیا ہے۔

نیب وکیل نے استدعا کی کہ شہباز شریف سے ابھی مزید تفتیش درکار ہے عدالت جسمانی ریمانڈ میں توسیع کرے۔ شہباز شریف کے وکیل نے جسمانی ریمانڈ کی مخالفت کی اور کہا 55 روز گزر گئے نیب کچھ ثابت نہیں کرسکا۔

سماعت کے بعد احتساب عدالت کے جج سید نجم الحسن نے 6 روزہ جسمانی ریمانڈ پر میاں شہباز شریف کو نیب حکام کے حوالے کر دیا ۔اس موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات تھے اور نون لیگی کارکن بھی جمع تھے 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *