لاہور ہائی کورٹ نے گورنر ہاوس کی دیواریں گرانے سے روک دیا

News Desk

لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس مامون الرشید نے شہری احسن نوید کی درخواست پر سماعت کی۔ فاضل جج نے ریمارکس دئیے کہ ایک اینٹ بھی اپنی جگہ سے نہیں ہلنی چاہئے دیواروں کو گرایا گیا تو ذمہ دار جیل میں ہوں گے۔


لاہور ہائیکورٹ میں گورنر ہاؤس کی دیواریں گرانے کے خلاف خواجہ محسن عباس نے درخواست دائر کی جس میں وفاقی اور پنجاب حکومت سمیت دیگر کو فریق بنایا گیا۔

درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا کہ گورنر ہاؤس تاریخی ورثہ ہے سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میں کسی تاریخی ورثے کی عمارت کو نقصان نہیں پہنچایا جاسکتا بلکہ اس کی تزئین و آرائش کی جاسکتی ہے۔


درخواست میں استدعا کی گئی کہ وزیراعظم کا حکم غیر قانونی ہے اس عمل سے عوام کے پیسے کا ضیاع ہوگا لہٰذا گورنر ہاؤس کی دیواریں توڑنے کو فوری روکا جائے۔
شہری بھی حکومت کے اس فیصلے پر تحفظات کا اظہار کرتے رہے۔حکومت کے اس اقدام پر مسلم لیگ ن نے پنجاب اسمبلی میں مذمتی قرارداد بھی جمع کرا دی ہے۔
گزشتہ روز پنجاب حکومت نے وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پر گورنر ہاوس لاہور کی دیواریں گرانے کا کام شروع کیا تھا جس کو روک دیا گیا ہے

عدالت نے درخواست پر مختصر سماعت کے بعد حکومت امتناع جاری کرتے ہوئے وفاقی اور صوبائی حکومت سے جواب طلب کر لیا ہے۔

واضح رہےکہ وزیراعظم عمران خان نے گورنر ہاؤس لاہور کی دیواریں گرانے کا حکم دیا تھا جس کے بعد دیواروں کو گرانے کا کام بھی شروع کردیا گیا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *