جنرل (ر) راحیل شریف کو جاری کیا جانے والا این او سی قانون کے مطابق نہیں ہے۔‎

News Desk

سپریم کورٹ نے سرکاری افسران کی دوہری شہریت والے کیس پر فیصلہ دیتے ہوئے کہا کہ جنرل (ر) راحیل شریف کو جاری کیا جانے والا این او سی قانون کے مطابق نہیں ہے۔ایک ماہ کی مہلت دیتے ہیں کہ این او سی کو درست کیا جائے۔عدالت نے جی ایچ کیو اور وزارت دفاع کو نوٹس جاری کردیا۔

چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے ازخود نوٹس کیس پر فیصلہ سنایا جو کہ بینچ نے ستمبر میں محفوظ کیا تھا۔

سپریم کورٹ نے سرکاری ملازمین کی دوہری شہریت سے متعلق تفصیلی فیصلہ جاری کیا ہے جس میں تحریر کیا گیا ہے کہ عدالت عظمیٰ نے اپنے فیصلے میں حکومت کو ہدایت کی کہ کابینہ کی منظوری کے بعد دہری شہریت کے معاملے پر قانون سازی کی جائے اور آئندہ اہم سرکاری عہدوں پر دہری شہریت والے افسران کو تعینات نہ کیا جائے۔

فیصلے میں لکھا گیا ہے کہ سابق آرمی چیف کا بیرون ملک ملازمت کا این او سی وفاقی حکومت نے جاری نہیں کیا بلکہ یہ اجازت نامہ جنرل ہیڈکوارٹر (جی ایچ کیو) اور وزارت دفاع نے جاری کیا۔
جنرل (ر) راحیل شریف نے ریٹائرمنٹ کے بعد سعودی عرب کی جانب سے قائم کیے جانے والے 34 ملکی فوجی اتحاد کی سربراہی سنبھالی تھی ۔اس غیرملکی نوکری کے لیے مسلم لیگ( ن) کے دور میں انکو این او سی جاری کیا گیا تھا۔تاہم بعد ازاں یہ بات سامنے آئی تھی کہ جنرل (ر) راحیل شریف کو جاری ہونے والا این او سی جی ایچ کیو اور وزارت دفاع کی جانب سے جاری کیا گیا تھا۔جس کی وفاقی حکومت سے توثیق نہیں کروائی گئی۔

سپریم کورٹ کے فیصلے کے مطابق وفاقی حکومت سے مراد وفاقی کابینہ ہے لہٰذا مقررہ مدت میں این او سی جاری نہ ہونے پر راحیل شریف غیر ملکی ملازمت سے سبکدوش تصور ہوں گے۔عدالت نے اپنے فیصلے میں ہدایت کی کہ وفاقی حکومت سابق سرکاری ملازمین کی غیر ملکی حکومتوں اور ایجنسیوں میں نوکریوں کی سالانہ رپورٹ پارلیمنٹ کو پیش کرے۔

واضح رہے کہ سابق آرمی چیف جنرل (ر) راحیل شریف پاک فوج سے ریٹائرمنٹ کے بعد گزشتہ سال 41 اسلامی ملکوں کی اتحادی فوج کے سربراہ مقرر کیے گئے تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *