شہباز شریف کو پی اے سی کا چیئرمین بنانے کا اقدام لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج‎

News Desk

سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف کی بطور چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی تقرری لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دی گئی۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ کرپشن کے الزامات پر گرفتار شخص کو چیئرمین پی اے سی نہیں بنایا جا سکتا۔

لاہور ہائیکورٹ میں اظہرصدیق ایڈووکیٹ کی جانب سے دائرکردہ درخواست میں وزیراعظم عمران خان اور الیکشن کمیشن آف پاکستان کو فریق بنایا گیا ہے۔

درخواست گزار کا موقف ہے کہ قومی اسمبلی رولز کے تحت کرپشن میں ملوث شخص کمیٹی کا چیئرمین نہیں بن سکتا۔ شہبازشریف بطور چیئرمین پی اے سی.نیب.ایف آئی اے اور دیگر اداروں کو طلب کر کے دباؤ میں لاسکتے ہیں۔

درخواست گزار نے استدعا کی کہ قومی اسمبلی کے رولز میں موجودہ حالات کی مناسبت سے ترامیم کی جائیں اور شہبازشریف کو چیئرمین پی اے سی بنانے کا اقدام کالعدم قرار دیا جائے۔

یاد رہے شہباز شریف 21 دسمبر کو بلامقابلہ چیئرمین پی اے سی منتخب ہوئے تھے اور بطور چیئرمین شہبازشریف کی زیر صدارت پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا اجلاس آج ہورہا ہے۔

واضح رہے کہ شہباز شریف آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم اسکینڈل کے سلسلے میں نیب لاہور کی حراست میں ہیں.نیب حکام پروڈکشن آرڈر جاری ہونے پر قومی اسمبلی اجلاس میں شرکت کے لیے انہیں لاہور سے اسلام آباد لاتے ہیں جبکہ وفاقی دارالحکومت کی انتظامیہ کی جانب سے منسٹر انکلیو میں واقع شہباز شریف کی رہائش گاہ کو سب جیل قرار دیا جاتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *