چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار سال 2018 کی بہترین شخصیت قرار

News Desk

چیف جسٹس آف پاکستان کو سال 2018 کی بہترین شخصیت کے اعزاز سے نواز دیا گیا. پاکستانی عوام کے ہردلعزیزچیف جسٹس میاں ثاقب نثار کو ہیرالڈ میگزین کی جانب سے اپنے تازہ ترین ایڈیشن میں اس اعزاز سے نواز گیا ہے۔

واضح رہے کہ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کو ایسے وقت میں اس خاص اعزاز سے نوازا گیا ہے جب وہ اپنی ریٹائرمنٹ سے چند روز کی دوری پر ہیں۔ 

واضح رہے کہ چیف جسٹس آف پاکستان  میاں ثاقب نثار نے پنجاب یونیورسٹی لا کالج سے ایل ایل بی کیا جس کے بعد انہوں نے وکالت کا پیشہ اختیار کیا۔

وہ سنہ 1982 میں ہائی کورٹ کے وکیل بنے جس کے بعد انہیں سنہ 1994 میں سپریم کورٹ میں وکالت کرنے کا لائسنس مل گیا۔

جسٹس میاں ثاقب نثار وزیر اعظم نواز شریف کے دور حکومت میں سیکریٹری قانون بھی رہے ہیں۔ اس کے علاوہ انہیں سنہ 1998 میں میاں نوازشریف کے دور میں ہی لاہور ہائی کورٹ کا جج مقرر کیاگیا۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے آخری دور میں اس وقت کی حکومت انہیں لاہور ہائی کورٹ کا چیف جسٹس مقرر کرنا چاہتی تھی تاہم اس وقت کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے رات کو عدالت لگا کر حکم جاری کیا کہ چیف جسٹس کی مشاورت کے بغیر کوئی اقدام نہ اٹھایا جائے۔

اس حکم کے بعد جسٹس میاں ثاقب نثار کو فروری سنہ 2010 میں سپریم کورٹ کا جج تعینات کر دیا گیا جب کہ اس وقت کے لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس خواجہ شریف کی مدت ملازمت کو توسیع کردی گئی۔

یاد رہے کہ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار رواں ماہ کی 17 تاریخ کو اپنے عہدے سے ریٹائر ہوجائیں گے۔ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کے 3 سالہ دور کو تاریخی دور قرار دیا جاتا ہے۔ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کے دور میں کئی تاریخی عدالتی فیصلے کیے گئے۔ ان فیصلوں میں جس فیصلے کو سب سے زیادہ مقبولیت حاصل ہوئی وہ سابق وزیراعظم نواز شریف کی نااہلی کا فیصلہ تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *