سانحہ ساہیوال: 16 پولیس اہلکاروں کے خلاف دفعات 302 اور 7 اے ٹی اے کے تحت مقدمہ‎

News Desk

سانحہ ساہیوال میں جاں بحق ہونے والوں کے لواحقین نے تھانہ یوسف والا میں مقدمہ درج کرنے کی درخواست دی ہے جس پر پولیس نے 16 پولیس اہلکاروں کے خلاف دفعات 302 اور 7 اے ٹی اے کے تحت مقدمہ درج کر لیا ہے۔

ساہیوال بائی پاس پر مظاہرین اور انتظامیہ کے مابین ڈیڈ لاک 17 گھنٹے تک برقرار رہا۔ مظاہرین میتیں سڑک پر رکھ کر احتجاج کر رہے تھے.ان کا مطالبہ تھا کہ واقعے میں ملوث اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج کیا جائے۔

ساہیوال انتظامیہ نے بار بار مذاکرات ناکام ہونے پر بالآخر مقدمہ درج کرنےکا فیصلہ کیا. ڈی پی او ساہیوال نے فائرنگ کرنے والے اہلکاروں کے خلاف  مقدمہ درج کرنے کا حکم دیا جس پر تھانہ یوسف والا نے پرچے کا اندراج کر لیا۔ مقدمے میں 16 اہلکاروں کو ملوث قرار دیا گیا ہے جن میں 10 باوردی اور 6 وردی کے بغیر اہلکار شامل ہیں۔

پرچہ جاں بحق ہونے والے خلیل کے بھائی جلیل کی مدعیت میں دفعات 302 اور انسداد دہشتگردی 7 اے ٹی اے کے تحت درج کیا گیا ہے۔ اس دوران تھانے کے باہر مظاہرین کی بڑی تعداد موجود رہی اور پولیس کے خلاف نعرے بازی کرتی رہی. پولیس کی جانب سے مقدمہ درج کیے جانے کے بعد جی ٹی روڈ پر لاشیں رکھ کر احتجاج کرنے والے مظاہرین نے دھرنا ختم کرنے کا اعلان کردیا۔

یاد رہے کہ ساہیوال میں گزشتہ روز سی ٹی ڈی نے مبینہ مقابلے میں دہشت گرد ذیشان کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا تھا جب کہ کارروائی میں دو خواتین اور ایک خلیل نامی شخص بھی مارا گیا اور واقعے میں تین بچے بھی زخمی ہوئے۔

واقعے کے خلاف ورثا سراپا احتجاج تھے اور لاشیں جی ٹی روڈ پر رکھ کر احتجاج کر رہے تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *