تحریک انصاف کے رہنما عبدالعلیم خان9 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے

نیوز ڈیسک

گذشتہ روز نیب کے ہاتھوں گرفتار ہونے والے سینئیر صوبائی وزیر اور رہنما پاکستان تحریک انصاف عبدالعلیم خان کو احتساب عدالت میں پیش کیا گیا ۔نیب اہلکار سخت سیکیورٹی میں علیم خان کو لے کر عدالت پہنچے تو عدالت کے باہر پی ٹی آئی کارکنان کی بڑی تعداد موجود تھی۔

جہاں احتساب عدالت کے جج سید نجم الحسن نے علیم خان کے خلاف اثاثہ جات کیس کی سماعت کی۔دورانِ سماعت نیب پراسیکیورٹر وارث جنجوعہ نے اپنے دلائل میں عدالت کو بتایا کہ علیم خان کا 2002 میں 190 لاکھ کا بانڈ نکلا ، 10کروڑ 90 لاکھ علیم خان کےوالد کو باہر سےآمدن آئی مگر بھیجنے والا کوئی نہیں، اے اینڈ اے سے والدہ کو 198 ملین 2012 میں آمدن آئی، باہر سے آئی آمدن تسلیم نہیں کرتے لیکن بانڈ تسلیم کرتے ہیں۔2005 میں عبدالعیلم خان نے اپنی بیوی کے نام کمپنی بنائی، کمپنی میں بھاری رقم کی سرمایہ کاری کی۔

میں 2017 انہوں نے بیرون ملک فلیٹ خریدے، لہذا مزید تفتیش کے لیے علیم خان کا 15 روزہ جسمانی ریمانڈ دیا جائے۔نیب پراسیکیوٹر تفصیلی رپورٹ لیکر احتساب عدالت میں پیش ہوئے، جس میں کہا گیا کہ عبدالعلیم خان نے ہیکسم انویسٹمنٹ اوورسیز لمیٹڈ کمپنی یو کے میں بنائی، ہیکسم انویسٹمنٹ اوورسیز لمیٹڈ کمپنی میں 99 ہزار 52 پاؤنڈ کا حساب نہ ملا، علیم خان نے آر اینڈ آر انٹرنیشنل ایف زیڈ سی یو اے ای میں بنائی، انہوں نے جمیرا گاؤں، ویلا اورنج لیک ویلا جمیراگالف دبئی میں اثاثے بنائے۔علیم خان کے وکیل نے مؤقف اپنایا کہ ان کے مؤکل کے تمام اثاثے قانونی ہیں جس کی دستاویزات ہم نے خود دیں، نیب نے آج تک آف شور اثاثوں سے متعلق ایک ثبوت پیش نہیں کیا-

نیب جن دستاویزات کی بات کر رہی ہے وہ ہم نے خود فراہم کیے، پبلک آفس ہولڈر ہونا کوئی جرم نہیں، علیم خان کاروبار کرتے ہیں، انہوں نے آج تک عہدے کا غلط استعمال کیا اور نہ کسی کرپشن کا الزام لگا، علیم خان کو جب بلایا گیا پیش ہوئے لہٰذا جسمانی ریمانڈ کی ضروت نہیں۔عبدالعلیم خان ے عدالت سے استدعا کی کہ میں کچھ کہنا چاہتا ہوں، جو کچھ کہوں گا حلفا کہوں گا۔

عدالتی اجازت پر علیم خان نیب کے خلاف پھٹ پڑے اور کہا 2002 سے کوئی شکایت نہیں آئی، اختیارات کا کوئی غلط استعمال نہیں ہوا، انہوں نے بس ایسے ہی کیس بنا دیا، یہ تمام چیزیں ٹیکس ریکارڈ میں بھی شامل ہیں، مجھے پیسے ورثے میں ملے ہیں، جو کچھ ریکارڈ ہے ہم نے خود دیا، نیب نے جب بلایا پیش ہوا، نیب نے کوئی ریکارڈ انگلینڈ یا یو اے ای سے نہیں منگوایا۔احتساب عدالت نے عبدالعلیم خان کا 9 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرتے ہوئے کیس کی سماعت15 فروری تک ملتوی کر دی ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *