معروف قانون دان عاصمہ جہانگیر کی آج پہلی برسی منائی جا رہی ہے

نیوز ڈیسک

معروف قانون دان عاصمہ جہانگیر 27 جنوری 1952 میں لاہور میں پیدا ہوئیں۔ انہوں نے سماجی کارکن، قانون دان اورانسانی حقوق کی علم بردار کی حیثیت سے اپنی پہچان بنائی۔انہوں نے کنیئرڈکالج لاہور سے بی اے اورپنجاب یونیورسٹی سے ایل ایل بی کی ڈگری حاصل کی اور پھر اپنی محنت شاقہ سے نکھرتی اور اُبھرتی چلی گئیں۔

انہوں نے 1998 سے 2004 تک ماورائے قانون ہلاکتوں کے حوالے سے اقوام متحدہ کے خصوصی نمائندہ کے طور پر خدمات سرانجام دیں۔ اسی طرح وہ 2004 سے 2010 تک مذہب اور عقیدہ کی آزادی کے حوالے سے اقوام متحدہ کی خصوصی نمائندہ تھیں۔

انہیں انسان دوستی اور جرات عمل کے حوالے دنیا بھر میں بہت احترام کی نظر سے دیکھا جاتا تھا۔معروف قانون دان پاکستان میں انسانی حقوق کی علمبردار اور سیکیورٹی اداروں کی ناقد کے طور پر پہچانی جاتی رہی ہیں۔

عاصمہ جہانگیر انسانی حقوق کمیشن کی سابق سربراہ بھی رہیں۔اردن کےرائل اسلامک اسٹریٹجک اسٹڈیزسینٹرنے 2018 میں دنیا کی 500 با اثرترین مسلم شخصیات کی رپورٹ جاری کی جس میں انسانی حقوق کی آواز بلند کرنے پر عاصمہ جہانگیرکا نام سرفہرست تھا۔

عاصمہ جہانگیر نے انسانی حقوق کمیشن کی بنیاد رکھی اور سپریم کورٹ بار کی صدربھی رہیں۔ انہوں نے کئی انٹرنیشنل ایوارڈزاپنے نام کیے اور 11 فروری 2018 کو برین ہمریج کے باعث اُن کا انتقال ہوگیا۔ بعد از مرگ انہیں نشان امتیاز سے نوازا گیا۔

عاصمہ جہانگیر کو دنیا بھر میں ایک بہادر خاتون کہا جاتا تھا۔معروف سماجی کارکن 2005 میں نوبل امن انعام کے لئے بھی نامزد ہوئی تھیں۔

انہیں انسان دوستی اور جرات عمل کے حوالے دنیا بھر میں بہت احترام کی نظر سے دیکھا جاتا تھا۔معروف قانون دان پاکستان میں انسانی حقوق کی علمبردار اور سیکیورٹی اداروں کی ناقد کے طور پر پہچانی جاتی رہی ہیں۔

عاصمہ جہانگیر انسانی حقوق کمیشن کی سابق سربراہ بھی رہیں۔اردن کےرائل اسلامک اسٹریٹجک اسٹڈیزسینٹرنے 2018 میں دنیا کی 500 با اثرترین مسلم شخصیات کی رپورٹ جاری کی جس میں انسانی حقوق کی آواز بلند کرنے پر عاصمہ جہانگیرکا نام سرفہرست تھا۔

عاصمہ جہانگیر نے انسانی حقوق کمیشن کی بنیاد رکھی اور سپریم کورٹ بار کی صدربھی رہیں۔ انہوں نے کئی انٹرنیشنل ایوارڈزاپنے نام کیے اور 11 فروری 2018 کو برین ہمریج کے باعث اُن کا انتقال ہوگیا۔

بعد از مرگ انہیں نشان امتیاز سے نوازا گیا۔عاصمہ جہانگیر کو دنیا بھر میں ایک بہادر خاتون کہا جاتا تھا۔معروف سماجی کارکن 2005 میں نوبل امن انعام کے لئے بھی نامزد ہوئی تھیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *