ترک صدر کا وزیراعظم عمران خان کو فون پاک بھارت کشیدگی پر بات چیت

نیوزڈیسک

وزیراعظم عمران خان کی ترک صدر رجب طیب اردگان سے ٹیلی فونک گفتگو۔پاک بھارت کشیدگی اور صورتحال معمول پر لانے کے لیے پاکستان کے اقدامات سے آگاہ کیا۔ ترک صدر نے مسائل پرامن طریقہ سے حل کرنے کی وزیراعظم کی کوششوں کو سراہا۔


ترک صدر رجب طیب اردگان نے وزیراعظم عمران خان کو ٹیلی فون کیا اور پاک بھارت کشیدہ صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔ ترک صدر نے کشیدگی کے خاتمے کے لئے وزیراعظم عمران خان کی پارلیمنٹ میں تقریر اور بھارت کو مذاکرات کی پیش کش کو سراہا۔ ترک صدر کا کہنا تھا کہ اسلام پرامن مذہب ہے اور معاملات کو پرامن طریقے سے حل کرنے پر زور دیتا ہے۔


طیب اردگان نے وزیراعظم کی جانب سے گرفتار بھارتی پائلٹ کی رہائی کے فیصلے اور جذبہ خیر سگالی کو سراہا۔ وزیراعظم عمران خان نے ترک صدر کو بھارت کے ساتھ کشیدہ تعلقات پر بریف کیا۔

وزیراعظم نے بھارت کے ساتھ کشیدگی کے خاتمے کے لئے پاکستان کی جانب سے کئے گئے اقدامات سے آگاہ کیا۔ وزیراعظم عمران خان نے مقبوضہ کشمیر میں نہتے کشمیریوں کے خلاف بھارتی مظالم کی جانب بھی ترک صدر کی توجہ مبذول کرائی۔

وزیراعظم عمران خان نے پاکستان اور کشمیریوں کی مسلسل حمایت پر ترک صدر کا شکریہ ادا کیا۔ یاد رہے14 فروری 2019 کو مقبوضہ کشمیر کے ضلع پلوامہ میں بھارتی فوجی قافلے پر خود کش حملہ ہوا تھا جس میں 45 سے زائد اہلکار ہلاک ہوئے تھے۔ اس کے بعد بھارت نے بغیر کسی ثبوت کے حملہ کا ذمہ دار پاکستان کو ٹھہرانا شروع کردیا تھا۔


وآضح رہے کہ 27 فروری کی صبح پاک فضائیہ کے طیاروں نے لائن آف کنٹرول پر مقبوضہ کشمیر میں 6 ٹارگٹ کو انگیج کیا۔فضائیہ نے اپنی حدود میں رہ کر ہدف مقرر کیے پائلٹس نے ٹارگٹ کو لاک کیا لیکن ٹارگٹ پر نہیں بلکہ محفوظ فاصلے اور کھلی جگہ پر اسٹرائیک کی جس کا مقصد یہ بتانا تھا کہ پاکستان کے پاس جوابی صلاحیت موجود ہے لیکن پاکستان کو ایسا کام نہیں کرنا چاہتا جو اسے غیر ذمہ دار ثابت کرے۔


بھارتی فضائیہ کے 2 جہاز ایل او سی کی خلاف ورزی کرکے پاکستان کی طرف آئے لیکن پاک فضائیہ تیار تھی جس نے دونوں بھارتی طیاروں کو مار گرایا ایک جہاز آزاد کشمیر جبکہ دوسرا مقبوضہ کشمیر کی حدود میں گرا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *