پاک فوج نے مجھ پر کوئی تشدد نہیں کیاابھی نندن کا اعتراف‎

نیوزڈیسک

پاکستان کی جانب سے خیر سگالی کے جذبے کے تحت رہا کیے گئے انڈین پائلٹ ابھی نندن نے بھارتی حکام کے روبرو سچ بولتے ہوئے اعتراف کیا ہے کہ پاکستانی فوج نے ناصرف اس کے ساتھ بہت اچھا سلوک کیا بلکہ بہت خیال رکھا۔ بھارتی ایئر فورس کے ونگ کمانڈر ابھی نندن ورتھامن کو جمعہ کے روز واہگہ بارڈر پر بھارتی حکام کے حوالے کیا گیا جس کے بعد اسے اسپتال منتقل کیا گیا۔

بھارتی پائلٹ ابھی نندن کی وزیر دفاع سے خصوصی ملاقات کرائی گئی جس میں اس نے اعتراف کیا کہ میں نے تقریباً 60 گھنٹے پاک فوج کے زیر حراست گزارے لیکن اس دوران مجھے جسمانی یا ذہنی طور پر تشدد کا نشانہ نہیں بنایا گیا بلکہ ہر طرح سے خیال رکھتے ہوئے تمام سہولیات فراہم کی گئیں۔ یاد رہے کہ بھارت روانگی سے قبل بھی ونگ کمانڈر ابھی نندن نے خصوصی ویڈیو بیان ریکارڈ کرایا جس میں اس نے کہا کہ میں یہ بات آن ریکارڈ کہنا چاہتا ہوں کہ پاک آرمی کا رویہ میرے ساتھ بہت اچھا تھا پاکستان آرمی بہت پروفیشنل ہے۔

خیال رہے کہ ابھی نندن کو وزیراعظم پاکستان عمران خان نے خیر سگالی کے جذبے کے تحت رہا کرنے کا اعلان کیا تھا۔ ان کے اس اقدام سے دنیا بھر میں نہ صرف پاکستان کا وقار بلند ہوا بلکہ ہر طرف سے اس اقدام کی تعریف کی جا رہی ہے۔

یاد رہے کہ ونگ کمانڈر ابھی نندن بھارتی طیارے مگ 21 بیسن کا پائلٹ تھا جسے پاک فضائیہ نے 27 فروری کی صبح کی گئی کارروائی کے دوران گرایا تھا اس دوران بھارتی پائلٹ پیراشوٹ کی مدد سے آزاد کشمیر کے علاقے میں اترا جسے شہریوں نے پکڑ کر تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد پاک فوج کے حوالے کردیا تھا۔

وآضح رہے کہ27 فروری کی صبح پاک فضائیہ کے طیاروں نے لائن آف کنٹرول پر مقبوضہ کشمیر میں 6 ٹارگٹ کو انگیج کیا۔فضائیہ نے اپنی حدود میں رہ کر ہدف مقرر کیے۔ پائلٹس نے ٹارگٹ کو لاک کیا لیکن ٹارگٹ پر نہیں بلکہ محفوظ فاصلے اور کھلی جگہ پر اسٹرائیک کی جس کا مقصد یہ بتانا تھا کہ پاکستان کے پاس جوابی صلاحیت موجود ہے.


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *