ایک اور سنگ میل عبور، تھر کول سے بجلی کی پیداوار شروع

نیوز ڈیسک

صوبہ سندھ کے علاقہ تھر پارکر میں واقع بجلی کے 330 میگاواٹ پاورپلانٹ سے نیشنل گرڈ کو بجلی کی فراہمی شروع کر دی گئی ۔بجلی کی فراہمی کے تاریخی موقع پر تھرکول انتظامیہ خوشی سے نہال ہوگئتے، ملازمین نے کامیابی پر جشن منایا اور مٹھائیاں تقسیم کیں۔

وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹویٹ کیا ہے کہ آج پاکستان کیلئے بڑا دن ہے۔سندھ پاکستان کو توانائی، سلامتی کی راہ پر گامزن کررہا ہے، تھر سے پاکستان کے بدلنے کا عمل شروع ہو چکا ہے۔

سندھ میں مقامی کوئلے سے 660 میگا واٹ بجلی پیدا کرنے والا ایک اور پاور پلانٹ بھی 2019 میں ممکنہ طور پر کام شروع کر دے گا۔پاکستان پیپلز پارٹی کے چئیر مین لاول بھٹو زرداری نے بھی عوام کو مبارکباد پیش کی۔

حکومت سندھ اور نجی کمپنیوں کے اشتراک سے یہ منصوبہ دو ہزارگیارہ میں دوسو ارب کی لاگت سے شروع کیا گیا تھا۔ماہرین کے مطابق تھر کول ایک ایسا پروجیکٹ ہے جس کی وجہ سے تھر میں پایا جانے والا کوئلہ ملک میں توانائی بحران کے حل کا ضامن ہے۔

تھر کوئلے سے حا صل ہو نے والی بجلی کے نرخ ابتدا میں 17.4 جو 8سال کے اندر کم ہو کر08.2روپے فی یونٹ رہ جائیں گے۔تھر میں کوئلے کے ذخائر کو 13بلاکس میں تقسیم کیا گیا ہے۔ 98 مربع کلو میٹر کا رقبہ سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی کے پاس ہے جس میں1.57 بلین ٹن کوئلہ موجود ہے جس کے ذریعے آئندہ پچاس برس تک5ہزار میگا واٹ بجلی پیدا کی جاسکے گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *